اشاعتیں

Adarshnama آدرش نامہ لیبل والی پوسٹس دکھائی جا رہی ہیں

ڪراچي جا قديمي وارث ۽ سنڌ جو مجموعي سياسي رويو

تصویر
ڪراچي جا قديمي وارث ۽ سنڌ جو مجموعي سياسي رويو ليکڪ:  آدرش ۽ محمد بلوچ ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ هڪڙو منٽ ترسو... "ڪرانچي ڪسي ڪي باپ ڪي جاگير نھين" جي بڪوات ۽  "ڪراچي سنڌ آ!!!" جي هڪلن کي ٿورڙي دير لاءِ ٻنجهو ڏيو... ساهي پٽيو... گھڻو ڳالھائي چڪا... هاڻ ٿورڙو ٻُڌي بہ وٺو... ڪيتري وقت کان  ھي مورچا بنديون وقفي وقفي سان ھلنديون ٿيون اچن.. اها ڪا نئين ڳالھ ڪونھي... سال ۾ هڪڙي سيزن ايندي آهي تہ هُتان ڪو ٽرڙو ڇورو لونڊو لپاڙو "ڪرانچي همارا هے" جي هِينگ ڏيندو آهي ۽ سامھون خماريل جوڌا ڇرڪ ڀري جاڳندا آهن... "ڪراچي سنڌ آ...!!!" سڀ  ان پراڻي PUBG گيم ۾ لڳا پيا آهن... پوءِ اھو ريٽنگ جو بکيو اردو ڳالھائيندڙ صحافي ھجي يا انھن جو تعصب ۾ ٻڏل نالي ڪٺيو دانشور .. يا وري قاضيءَ کان حاجيءَ جو لقب ماڻيل اسان جو ڪو مھا ڏاھو هجي يا واندو ويھي ويھي ڪڪ ٿي پيل قوم پرست...  سڀ پنھنجن پنھنجن مورچن تي بيھي گولي باري ڪري رھيا آھن.. ھن سڄي وايو منڊل ۾ لکن جي انگ ۾  ڪيترين ئي صدين کان هتي رھندڙ اصلوڪن س

"کرانچی ہمارا" اور "مرسوں مرسوں" کے شور میں دبی یہ آواز.... ذرا سی توجہ چاہتی ہے.

تصویر
" کراچی سندھ ہے" کا نعرہ اور کراچی میں صدیوں سے آباد ہم مقامی لوگ آدرش کے قلم سے ایک منٹ...  "کرانچی کسی کے باپ کا نہیں" اور "کراچی سندھ ہے" کی بحث کو تھوڑی دیر کے لیے روک دیجیے،  منہ سے اڑتی جھاگ صاف کیجیے... بہت بول لیا آپ نے.... اب تھوڑا سا سن بھی لیجیے... بہت دنوں سے سوشل میڈیا میں ایک بھونچال سا مچا ہوا ہے، کہ "سندھ کراچی ہے" ، ٹوئیٹر میں " کراچی سندھ ہے" کا ٹرینڈ چل رہا ہے، سیاست دان کیا صحافی، دانشور کیا طلباء سب "کراچی سندھ ہے" کا نعرہ لگاتے نظر آ رہے ہیں، یہ کوئی نئی بات نہیں، سال میں ایک دو مہینے ایسے آتے ہیں کہ اُدھر سے ایک لونڈا لپاڑا اٹھ کر "کرانچی ہمارا ہے" کی تان کھینچتا یے، اور پھر سامنے سے "کراچی سندھ ہے... کراچی سندھ ہے" کا راگ الاپنا شروع ہو جاتا ہے. اس ہڑبونگ اور کھینچاتانی میں کراچی میں صدیوں سے آباد بےچارے بلوچی اور سندھی بولنے والوں سے تو کسی نے پوچھا تک نہیں کہ وہ کس حال میں ہیں... وہ تو دو پاٹوں کے بیچ پِستے چلے آ رہے ہیں.. جب سندھ کا ثقاف

ملیر کی صدائے بے نوا. آدرش کے قلم سے

تصویر
ملیر کی صدائے بےنوا تحریر: آدرش ایک دن پہلے ایک واٹس ایپ گروپ سے ایک آواز صدا بن کر گونجی، جس میں ملیر کا ایک معزز انسان اپنے درد کو زبان دے رہا تھا. اس آواز میں درد تھا، مگر یہ درد کسی ایک شخص کا نہیں، یہ درد پورے ملیر کا ہے. ملیر کی زمین کے اجڑے ہوئے ایک ایک حصے کا درد، جہاں کبھی زمین سے سونا اگلتا تھا، آج بےبسی جھلکتی ہے. آواز کا جو بیان تھا وہ اس طرح کا تھا کہ ملیر میں سرکار نے گٹر کے پانی سے زراعت کرنے والے ایک غریب کسان کی فصل تلف کر دی، اس کسان نے دن رات محنت کر کے وہ زمین آباد کی تھی. مگر یکلخت ایک فیصلے سے اس کی ساری محنت کو تاراج کردیا گیا، جس میں اس کا خون پسینہ شامل تھا. ملیر میں گٹر کے پانی سے فصلیں کاشت کرنے والے بہت کم کسان ہوں گے، جو  نہ چاہ کر بھی ایسا کرنے پر مجبور ہیں. سوال یہاں یہ بھی اٹھتا ہے کہ جس پولیس نے آج یہ فصل تاراج کی ہے، اسی نے ہی تو اپنی نگرانی میں ملیر کی سونے جیسی ریتی بیچ کر ملیر کی زمین کی شریانوں سے پانی کی ایک ایک بوند کو نچوڑا ہے! آخر سطح پر تیرنے کی بجائے، کوئی گہرائی میں جا کر اس سوال کا جواب کیوں نہیں ڈھونڈتا کہ یہ ن