آپ یہ تقریر پڑھ کر حیران رہ جائیں گے کہ یہ پون صدی قبل کی تقریر ہے یا  آج کی تصویر!؟

khaksar tehreek alama mashraqi urdu


علامہ مشرقی کی ایک یادگار تقریر سے اقتباس


علامہ عنایت اللہ خاں مشرقی  1888ء میں امرتسر میں پیدا ہوئے. ﻋﻼﻣﮧ ﻣﺸﺮﻗﯽ ایک ہمہ جہت شخصیت تھے، وہ ﺑﻠﻨﺪ ﭘﺎﯾﮧ ریاضیدان، ﺍﻧﺸﺎﭘﺮﺩﺍﺯ، ﻓﻠﺴﻔﯽ، شاعر، سیاستدان، ﻣﻮﺭﺥ، مفسر اور کئی کتابوں کے مصنف  ﺗﮭﮯ۔ وہ کرداری اور عملی سطح پر انقلابی تبدیلی کی خاکسار تحریک کے روحِ رواں بھی تھے، لیکن اس سب کے باوجود ہم نے انہیں اپنی من پسند تاریخ کے معروف حصے میں جگہ نہیں دی.

علامہ مشرقی نے 18 ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﭘﻨﺠﺎﺏ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﺍﯾﻢ ﺍﮮ ﺭﯾﺎﺿﯽ  پہلی ﭘﻮﺯﯾﺸﻦ ‏(1906) ﻣﯿﮟ اور اس کے بعد ﮐﯿﻤﺒﺮﺝ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﺑﯿﮏ ﻭﻗﺖ ﭼﺎﺭ ﭨﺮﺍﺋﯽ ﭘﻮﺯ ﺁﻧﺮﺯ ﺭﯾﻨﮕﻠﺮ ﺳﮑﺎﻟﺮ، ﺑﯿﭽﻠﺮ ﺳﮑﺎﻟﺮ، ﻓﺎﺅﻧﮉﯾﺸﻦ ﺳﮑﺎﻟﺮ ﺍﻭﺭﻣﮑﯿﻨﯿﮑﻞ ﺍﻧﺠﯿﻨﺌﺮﻧﮓ ﻣﯿﮟ ﺍﻋﻠﯽٰ ﭘﻮﺯﯾﺸﻦ ﻣﻊ ﻭﻇﺎﺋﻒ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ نے کے بڑے کارنامے سرانجام دیے۔

انہوں ﻧﮯ 1945ﺀ ﻣﯿﮟ نہ صرف دلائل کے ذریعے ﻣﺮﻭﺟﮧ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﺟﻤﮩﻮﺭﯾﺖ ﮐﻮ ﺯﺭ ﭘﺮﺳﺖ ﻣﺎﻓﯿﺎ ﮐﯽ ﺳﺎﺯﺵ ﺛﺎﺑﺖ کیا، بلکہ اس کے ساتھ اس ﺯﺭ ﭘﺮﺳﺖ ﻣﺎﻓﯿﺎ ﮐﺎ ﺩﻧﯿﺎ ﮐﮯ ﻭﺳﺎﺋﻞ ﭘﺮ ﺳﮯ ﻗﺒﻀﮧ ﺧﺘﻢ ﮐﺮﻭﺍﻧﮯ کے ﻓﻄﺮﺗﯽ ﺣﻞ پر مبنی ﺣﻘﯿﻘﯽ ﺍﺳﻼﻣﯽ ﻓﻄﺮﯼ ﺟﻤﮩﻮﺭﯾﺖ ﮐﺎ ﻓﺎﺭﻣﻮﻻ ”ﻃﺒﻘﺎﺗﯽ ﻃﺮﯾﻖِ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ“ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ بھی کیا.

علامہ ﻣﺸﺮﻗﯽ نے 14 ﺟﻮﻻﺋﯽ 1947ء کو پٹنہ میں پچاس ہزار لوگوں کے ایک بڑے مجمع کے سامنے تاریخ ساز تقریر کی تھی، یہاں ہم سنگت میگ کے صفحات پر ان کی اس ﺗﻘﺮﯾﺮ ﺳﮯ اہم ﺍﻗﺘﺒﺎﺱ پیش کر ریے ہیں، ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ 73 سال یعنی پون صدی ﻗﺒﻞ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﺎ ﻣﮑﻤﻞ ﻣﻨﻈﺮﻧﺎﻣﮧ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﮨﮯ.

یہ ناممکن ہے کہ آپ علامہ مشرقی کی تقریر کا   یہ اقتباس  پڑھیں اور حیرت زدہ نہ ہوں... کیونکہ یہ  پون صدی پہلے کی گئی تقریر نہیں، بلکہ آج کے حالات کی ہو بہو اور حقیقی تصویر ہے. 

تقریر سے اقتباس:

ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﮐﺎ ﺍﻥ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ پُر امن ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺳﭙﺮﺩ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ ،
ﺟﻦ ﮐﻮ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻃﺮﯾﻖِ تخیُّل ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ ،
ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ ﺑﺮﭨﺶ ﺭﺍﺝ ﮐﻮ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﻻﻧﮯ ﮐﮯ ﺳﻮﺍ ﮐﭽﮫ ﭘﯿﺪﺍ ﻧﮧ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ ﮔﺎ .

ﺍﯾﺴﺎ ﺭﺍﺝ ﺑﺮﭨﺶ ﺭﺍﺝ ﮐﯽ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﺻﻮﺭﺕ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺩﺱ ﮔﻨﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻇﺎﻟﻤﺎﻧﮧ
ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﺪﺻﻮﺭﺕ،
ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﮭﯿﺎﻧﮏ
ﺍﻭﺭ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﺮﻣﺎﯾﮧ ﺩﺍﺭﺍﻧﮧ ﮨﻮﮔﺎ .

ﯾﮧ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﺎﻡ ﺳﭽﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻟﭧ ﮨﻮﮔﺎ
ﺍﻭﺭ ﭘﭽﮭﻠﮯ ﺳﻮ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﻧﮯ ﺟﻮ ﺑﮭﻠﯽ ﯾﺎ ﺑﺮﯼ ﺷﮯ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮐﻮ ﺩﯼ ﮨﮯ،
ﯾﮧ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﺴﺦ ﺷﺪﮦ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﮨﻮﮔﺎ..
ﯾﮧ ﻓﯽ ﺍﻟﺤﻘﯿﻘﺖ ﺍﯾﮏ ﻣﻨﻈﻢ ﻓﺘﻨﮧ،
ﺍﯾﮏ ﻣﺴﺘﻘﻞ ﻇﻠﻢ
ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﺋﺪﺍﺭ ﮨﮍﺑﻮﻧﮓ ﮨﻮﮔﯽ،
ﺟﺲ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﮨﮍﺑﻮﻧﮓ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﯽ .

ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﭩﻢ ﺑﻢ ﮐﯽ ﺩﺍﺋﻤﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ
ﺍﻭﺭ ﻭﺣﺸﺖ ﮐﯽ ﺩﺍﺋﻤﯽ ﺑﺎﺩﺷﺎﮨﯽ ﮨﻮﮔﯽ،
ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﮐﮯ ﻗﺘﻞِ ﻋﺎﻡ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺯ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮨﻮﮔﺎ،
ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﺎﺅﮞ ﮐﮯ ﭘﯿﭧ ﻣﯿﮟ ﻗﺘﻞ ﮐﺮﻧﺎ،
ﻣﺨﺎﻟﻒ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ ﺗﻤﺪﻥ ﺍﻭﺭ ﮐﻠﭽﺮ ﮐﻮ ﯾﮑﺴﺮ ﻣﭩﺎﻧﺎ،
ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﺻﺤﯿﺢ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﮐﻮ ﻣﻠﯿﺎ ﻣﯿﭧ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ،
ﻣﻠﯽ ﻓﻠﺴﻔﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﻮﺕ،
ﺑﺎﻋﺰﺕ ﺭﻭﺍﯾﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﯿﺴﺖ ﻭ ﻧﺎﺑﻮﺩ ﮐﺮﻧﺎ
ﺍﻭﺭ ﺧﯿﺎﻻﺕ ﮐﺎ ﻗﺘﻞِ ﻋﺎﻡ ﮐﺮﻧﺎ
ﺍﻥ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﺋﺰ ﮨﻮﮔﺎ..

ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ کی ﮐﺴﯽ ﺍﯾﮏ ﯾﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﯿﺎﺳﯽ ﺟﻤﺎﻋﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺳﭙﺮﺩ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ
ﺍﺱ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﺷﮩﻨﺸﺎﮨﯿﺖ،
ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﺳﺮﻣﺎﯾﮧ ﺩﺍﺭﯼ،
ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﺪﺗﺮﯾﻦ ﮨﻼﮐﻮ ﺧﺎﻧﯿﺖ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﺩﮮ ﮔﺎ،
ﺟﻮ ﺁﺝ ﺗﮏ ﮐﺴﯽ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻧﮯ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﯽ ﮨﯿﮟ..
ﺍﯾﺴﺎ ﺭﺍﺝ ﺩﺭﺍﺻﻞ ﺑﺮﻃﺎﻧﻮﯼ ﺭﺍﺝ ﺗﻮ ﮨﻮﮔﺎ
ﻣﮕﺮ ﺑﺮﭨﺶ ﺭﺍﺝ ﮐﯽ ﺧﻮﺑﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﻋﺎﺭﯼ ﮨﻮﮔﺎ.
ﯾﮧ ﺭﺍﺝ ﻓﯽ ﺍﻟﺤﻘﯿﻘﺖ ﺑﺮﭨﺶ ﺭﺍﺝ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺑﺮﭨﺶ ﺭﺍﺝ ﮐﺎ ﻋﻠﻤﺒﺮﺩﺍﺭ ﮨﻮﮔﺎ،
ﺟﻮ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺩﻭﺯﺥ ﮐﺎ ﻧﻤﻮﻧﮧ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﮮ ﮔﺎ،
ﯾﮧ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺗﮩﺬﯾﺐ ﺍﻭﺭ ﺗﻤﺪﻥ ﮐﻮ ﻣﭩﺎ ﺩﮮ ﮔﺎ،
ﺍﺧﻼﻗﯽ ﺍﻗﺪﺍﺭ ﮐﮯ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﺁﺋﯿﻦ ﮐﻮ،
ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺍﺩﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﻓﻠﺴﻔﮯ ﮐﻮ ﺗﮩﺲ ﻧﮩﺲ ﮐﺮﺩﮮ ﮔﺎ،
ﺑﻠﮑﮧ ﺩﺭﺣﻘﯿﻘﺖ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺳﭽﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ،
ﺟﻮ ﺑﺮﺍﻋﻈﻢ ﻧﮯ ﭘﭽﮭﻠﮯ ﭘﺎﻧﭻ ﮨﺰﺍﺭ ﺳﺎﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﯽ ﻧﻮﻉِ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺩﯼ ﮨﯿﮟ،
ﯾﮑﺴﺮ ﻧﯿﺴﺖ ﻭ ﻧﺎﺑﻮﺩ ﮐﺮ ﺩﮮ ﮔﺎ.

ﻣﺠﮭﮯ ﺧﻄﺮﻧﺎﮎ ﺷﮑﻮﮎ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﺍﻥ ﺣﮑﻮﻣﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﺎﺗﺤﺖ ﺍﭨﮭﺎﺭﮦ ﮐﺮﻭﮌ ﮨﻨﺪﻭ
ﯾﺎ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎ " ﻧﻮ ﮐﺮﻭﮌ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ
ﯾﺎ ﭼﮫ ﮐﺮﻭﮌ ﺍﭼﮭﻮﺕ
ﺍﺱ ﻗﺪﺭ ﺯﻧﺪﮦ ﺑﮭﯽ ﺭﮦ ﺳﮑﯿﮟ ﮔﮯ
ﮐﮧ ﺍﺱ ﻇﻠﻢ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺁﻭﺍﺯ ﺍﭨﮭﺎ ﺳﮑﯿﮟ!؟
ﻣﺠﮭﮯ ﺳﺨﺖ ﺷﮑﻮﮎ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺁﯾﺎ ﻋﺮﺑﯽ ﮐﮯ ﮨﻨﺪﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﺎﻗﯽ ﺭﮨﯿﮟ گے!؟
ﻋﺮﺑﯽ ﮐﮯ ﺣﺮﻭﻑِ ﺗﮩﺠﯽ ﺑﮭﯽ ﻗﺎﺋﻢ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ!؟
ﯾﺎ ﭘﻠﮍﺍ ﺍﮔﺮ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺟﮭﮏ ﮔﯿﺎ
ﺗﻮ ﺳﻨﺴﮑﺮﺕ ﺯﺑﺎﻥ ﺍﻭﺭ ﮨﻨﺪﻭ ﻓﻠﺴﻔﮯ ﮐﺎ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﻡ ﻭ ﻧﺸﺎﻥ ﺑﮭﯽ ﺑﺎﻗﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ؟

ﺍﻧﺘﻘﺎﻝِ ﺍﻗﺘﺪﺍﺭ ﮐﯽ ﻣﻮﺟﻮﺩﮦ ﺗﺠﻮﯾﺰ ﻣﯿﺮﯼ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﻻ ﺭﺍﺝ، ﺑﺮﮨﻤﻦ ﺭﺍﺝ، ﺧﺎﻥ ﺑﮩﺎﺩﺭ ﺭﺍﺝ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﭨﺶ ﺭﺍﺝ ﮐﯽ ﺑﮯ ﺭﺣﻤﺎﻧﮧ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺷﯿﻄﺎﻧﯽ ﺗﺠﻮﯾﺰ ﮨﮯ
ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺴﺎﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﮰ ﺗﻤﺮﺩ، ﺳﺮﻣﺎﯾﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﻇﻠﻢ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ!

تبصرے

اس بلاگ سے مقبول پوسٹس

"کرانچی ہمارا" اور "مرسوں مرسوں" کے شور میں دبی یہ آواز.... ذرا سی توجہ چاہتی ہے.

Gates Foundation, Wuhan Lab and WHO hacked. کروناوائرس: اصل حقیقت آخر ہے کیا

بجٹ اور ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﻣﻼﺯﻣﯿﻦ  کی ﺗﻨﺨﻮﺍﮦ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ